ذرے اس خاک کے تابندہ ستارے ہونگے

Lyrics to ‘ذرے اس خاک کے تابندہ ستارے ہونگے’:

Zaray Us Khak Ke Tabinda Sitare Honge
ذرے اس خاک کے تابندہ ستارے ہونگے
جس جگہ آپ نے نعلین اتارے ہونگے

بوئے گل اس لیے پھرتی ہے چھپائے چہرہ
گیسو سرکار دوعالم نے سنوارے ہونگے

ایک میں کیا میرے شاہ کے شہنشاہ انکے
تیرے ٹکڑوں پہ شب و روز گزارے ہونگے

لوگ تو حسن عمل لیکے چلے روزحساب
سرورا ہم تو فقط تیرے سہارے ہونگے

اٹھ گئی جب تیری جانب وہ قدم بار نظر
اس گھڑی قطب تیرے وارے نیارے ہونگے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!