صبح طیبہ میں ہوئی بٹتا ہے باڑا نور کا

Lyrics to ‘صبح طیبہ میں ہوئی بٹتا ہے باڑا نور کا’:

صبح طیبہ میں ہوئی بٹتا ہے باڑا نور کا​
صدقہ لینے نور کا آیا ہے تارا نور کا​

باغِ طیبہ میں سہانا پھول پھولا نور کا​
مست بو ہیں بلبلیں پڑھتی ہیں کلمہ نور کا​

بارہویں کے چاند کا مجرا ہے سجدہ نور کا​
بارہ برجوں سے جھکا ایک اک ستارہ نور کا​

عرش بھی فردوس بھی اس شاہِ والا نور کا​
یہ مثمن برج وہ مشکوئے اعلیٰ نور کا​

تیرے ہی ماتھے رہا اے جان سہرا نور کا​
بخت جاگا نور کا چمکا ستارا نور کا​

میں گدا تو بادشاہ بھر دے پیالہ نور کا​
نور دن دونا تِرا دے ڈال صدقہ نور کا​

پشت پر ڈھلکا سرِ انور سے شملہ نور کا​
دیکھیں موسیٰ طور سے اترا صحیفہ نور کا​

تاج والے دیکھ کر تیرا عمامہ نور کا​
سر جھکاتے ہیں الٰہی بول بالا نور کا​

آبِ زر بنتا ہے عارض پر پسینہ نور کا​
مصحفِ اعجاز پر چڑھتا ہے سونا نور کا​

شمع دل مشکوٰۃ تن سینہ زجاجہ نور کا​
تیری صورت کے لئے آیا ہے سورہ نور کا​

تو ہے سایہ نور کا ہر عضو ٹکڑا نور کا​
سایہ کا سایہ نہ ہوتا ہے نہ سایہ نور کا​

وصفِ رخ میں گاتی ہیں حوریں ترانہ نور کا​
قدرتی بینوں میں کیا بجتا ہے لہرا نور کا​

ناریوں کا دور تھا دل جل رہا تھا نور کا​
تم کو دیکھا ہوگیا ٹھنڈا کلیجہ نور کا​

جو گدا دیکھو لیے جاتا ہے توڑا نور کا​
نور کی سرکار ہے کیا اس میں توڑا نور کا​

بھیک لے سرکار سے لا جلد کاسہ نور کا​
ماہِ نو طیبہ میں بٹتا ہے مہینہ نور کا​

تیری نسلِ پاک میں ہے بچہ بچہ نور کا​
تو ہے عینِ نور تیرا سب گھرانہ نور کا​

نور کی سرکار سے پایا دوشالہ نور کا​
ہو مبارک تم کو ذوالنورین جوڑا نور کا​

یہ جو مہر و مہ پہ ہے اطلاق آتا نور کا​
بھیک تیرے نام کی ہے استعارہ نور کا​

چاند جھک جاتا جدھر انگلی اٹھاتے مہد میں ​
کیا ہی چلتا تھا اشاروں پر کھلونا نور کا​

اے رضا یہ احمدِ نوری کا فیضِ نور ہے​
ہوگئی میری غزل بڑھ کر قصیدہ نور کا​


اعلیٰ حضرت الشاہ امام احمد رضا خان فاضلِ بریلوی رحمۃ اللہ علیہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

error: Content is protected !!