تضمین بر سلام رضا


اختر بُرجِ رفعت پہ لاکھوں سلام
آفتاب ِ رسالت پہ لاکھوں سلام
مجتبیٰ شانِ قُدرت پہ لاکھوں سلام
مصطفیٰ جان ِ رحمت پہ لاکھوں سلام
شمعِ بزم ہدایت پہ لاکھوں سلام

جب ہؤا ضوفگِن دین و دنیا کا چاند
آیا خلوت سے جلوت میں اسریٰ کا چاند
نکلا جس وقت مسعود بطحا کا چاند
جِس سُہانی گھڑی چمکا طیبہ کا چاند
اُس دل افروز ساعت پہ لاکھوں سلام

جس کی عظمت پہ صدقے وقارِ حرم
جس کی زلفوں پہ قُرباں بہار حرم
نوشۂ بزمِ پرور دگارِ حرم
شہریارِ ارم تاجدار حرم
نوبہارِ شفاعت پہ لاکھوں سلام

یہ سراپا حِسیں، رب ہے مطلق جمیل
اب نہیں اس میں گنجائش قال و قیل
یہ بھی اِک ایک ہے جیسے رب بے دلیل
بے سہیم وقسیم و عدیل و مثیل
جوہر فردِ عزت پہ لاکھوں سلام

جس کے قدموں پہ سجدے کریں جانور
منہ سے بولیں شجر، دیں گواہی حجر
وہ ہیں محبوبِ رب مالکِ بحروبر
صاحب رجعت شمس وشق القمر
نائب ِ دستِ قُدرت پہ لاکھوں سلام

کتنی ارفع ہے شانِ حبیبِ خدا
مالکِ دو سرا، سرورِ انبیاء
مقتدی جس کے سب، سب کا جو مقتدأ
جس کے زیر لوا آدم ومن سوا
اُس سزائے سیادت پہ لاکھوں سلام

جس کا فرمان فرمانِ جاں آفریں
پاک قانون جسکا کتاب مبین
وہ۔۔جو ہے مظہر ِ احکم الحاکمیں
عرش تا فرش ہے جس کے زیرِ نگیں
اس کی قاہر ریاست پہ لاکھوں سلام

رہبر دین ودنیا پہ بے حد دُرُود
شافع روز عقبیٰ پہ بے حد دُرُود
ہم ضعیفوں کے ملجا پہ بے حد دُرُود
ہم غریبوں کے آقا پہ بے حد دُرُود
ہم فقیروں کی ثروت پہ لاکھوں سلام

جس پہ قرباں ہیں طوبیٰ کی رعنائیاں
حسنِ موزو نیت کی فدا جس پہ جاں
جس کا روح الامیں بلبلِ مدح خواں
طائرانِ قدس جس کی ہیں قمریاں
اس سہی سرو قامت پہ لاکھوں سلام

رفعتیں بہر سجدہ جہاں خم رہیں
روزو شب کعبہ و لامکاں خم رہیں
بہرِ آداب کرّو بیاں خم رہیں
جس کے آگے سَرِ سروراں خم رہیں
اس سَرِ تاجِ رفعت پہ لاکھوں سلام

شام ِ فردوس کی نور واللیل کا
پر تو مرحمت رحمتِ کبریا
وہ سحاب عطا ظِلّ لطف خدا
وہ کرم کی گھٹا گیسُوئے مُشک سا
لکّہ ابرِ رحمت پہ لاکھوں سلام

منہ اندھیرے ضیائے سحر کی رمق
صبح کے خط سے یا پردہ شب ہے شق
چرخِ واللیل پر والضحیٰ کی شفق
لیلۃ القدر میں مطلع الفجر حق
مانگ کی استقامت پہ لاکھوں سلام

وصف گوشِ نبی اور میں کج مج زبان
ہے سجود القمر اسمع جن کی شان
جن پہ قربان حُسن سماعت کی جان
دور و نزدیک کے سننے والے وہ کان
کانِ لعلِ کرامت پہ لاکھوں سلام

جس کے چہرے پہ جلوؤ ں کا پہرا رہا
نجم طہ کے جُھرمت میں چہرا رہا
حسن جس کا ہر اک چھب میں گہرا رہا
جس کے ماتھے شفاعت کا سہرا رہا
اُس جبینِ سعادت پہ لاکھوں سلام

لا مکاں کی جبیں بہر سجدہ جھکی
رفعت ِ منزل عرشِ اعلیٰ جھکی
عظمتِ قبلۂ دین ودنیا جھکی
جن کے سجدے کو محرابِ کعبہ جھکی
اُن بھوؤں کی لطافت پہ لاکھوں سلام

پڑگئی جس پہ محشر میں بخشا گیا
دیکھا جس سمت۔ ابرِ کرم چھا گیا
رُخ جد ھر ہو گیا۔ زندگی پا گیا
جس طرف اُٹھ گئی۔ دم میں دم آ گیا
اُس نگاہ عنایت پہ لاکھوں سلام

فرق مطلوب و طالب کا دیکھے کوئی
قصّہ طور و معراج سمجھے کوئی
کوئی بے ہوش۔ جلوؤں میں گم ہے کوئی
کس کو دیکھا یہ موسی سے پوچھے کوئی
آنکھ والوں کی ہمت پہ لاکھوں سلام

اوجِ تابِ نگاہ ِ رسا پر دُرُود
بے جھجک۔ دید عینِ خدا پر دُرُود
معنی آیۂ ما طغیٰ پر دُرُود
نیچی آنکھوں کی شرم و حیا پر دُرُود
اُونچی بینی کی رفعت پہ لاکھوں سلام

جس کے جلوے زمانے میں چھانے لگے
جس کی ضو سے اندھیرے ٹھکانے لگے
جس سے ظلمت کدے نور پانے لگے
جس سے تاریک دل جگمگانے لگے
اُس چمک والی رنگت پہ لاکھوں سلام

مصحفِ نور پر آبِ رز کا ورق
یاکفِ حور پر موتیوں کا طبق
من رآنی میں ہے قدری کی رمق
شبنم باغِ حق یعنی رُخ کا عرق
اس کی سچی بُراوقت پہ لاکھوں سلام

مہ کو گھیرے ہوئے ہے سنہری کرن
یالب جو ہے خور شید پر تو فگن
موج دریارواں ہے کنار ِ چمن
خط کی گردِ دہن وہ دِل آراپھبن
سبزہ نہر ِ رحمت پہ لاکھوں سلام

موجِ حسنِ تبسم میں گل باریاں
اور گل باریوں میں لطافت کی شاں
جن میں قدرت کی باریکیاں ہیں نہاں
پتلی پتلی گلِ قدس کی پتیاں
اُن لبوں کی نزاکت پہ لاکھوں سلام

جس کے عالی مقالات وحی خدا
جس کے غیبی اِشارات وحی خدا
جس کے الفاظ۔ آیات وحی خدا
وہ دہن جس کی ہر بات وحی خدا
چشمۂ علم وحکمت پہ لاکھوں سلام

قلزم معرفت بہر عرفاں بنے
بحرِ توحید دریائے ایماں بنے
عین سر چشمۂ آبِ حیواں بنے
جس سے کھاری کنوئیں شیرۂ جاں بنے
اُس زُلالِ حلاوت پہ لاکھوں سلام

رحمتِ حق کی ہونےلگیں بارشیں
دین ودنیا کی نغمنے لگیں دولتیں
کھول دیں جس نے اللہ کی حکمتیں
وہ زباں جس کو سب کن کی کنجی کہیں
اُس کی نافذ حکومت پہ لاکھوں سلام

جس کے تابع ہیں مقبولیت کے اصول
منحصر جس پہ ہے رحمتوں کا نزول
وہ دعاجس پہ صدقے درودوں کے پھول
وہ دعا جس کا جوبن بہار ِ قبول
اُس نسیم اجابت پہ لاکھوں سلام

جس کی ضو سے ملے راستے دور کے
دن پھرے بختِ شب ہائے مہجور کے
جس سے برسیں گہر حسن مستور کے
جن کے کچے سے لچھے جھڑیں نور کے
ان ستاروں کی نزہت پہ لاکھوں سلام

مضطرب غم سے ہوتے ہوئے ہنس پڑیں
رنج سے جان کھوتے ہوئے ہنس پڑیں
بخت جاگ اُٹھیں سوتے ہوئےہنس پڑیں
جس کی تسکیں سے روتے ہوئے ہنس پڑیں
اُس تبسم کی عادت پہ لاکھوں سلام

اوج شان فصاحت پہ لاکھوں دُرود
حسن جان بلاغت پہ لاکھوں درود
گفتگو کی حلاوت پہ لاکھوں دُرود
اُس کی باتوں کی لذّت پہ لاکھوں درود
اُس کے خطبے کی ہیبت پہ لاکھوں سلام

خود سروں کی تنی گردنیں جھک گئیں
سر کشوں کی اُٹھی گردنیں جُھک گئیں
تھیں جو اونچی وہی گردنیں جھک گئیں
جس کے آگے کھینچی گردنیں جھک گئیں
اُس خدا داد شوکت پہ لاکھوں سلام

شمع روشن ہے قرآن کے متصل
دیکھ کر جن کو ہیں چاند سورج خجل
ہے عذار رسالت پہ تابندہ تل
حجر اسود کعبہ جان و دل
یعنی مہر نبوت پہ لاکھوں سلام

دین ودنیا دیئے مال اور زر دیا
حورو غلماں دیئے خلد و کوثر دیا
دامن ِ مقصدِ زندگی بھر دیا
ہاتھ جس سمت اُٹھا غنی کر دیا
موجِ بحر سماحت پہ لاکھوں سلام

ڈوبا سورج کسی نے بھی پھیرا نہیں
کوئی مثل یداللہ دیکھا نہیں
جس کی طاقت کا کوئی ٹھکانا نہیں
جس کو بار دو عالم کی پروا نہیں
ایسے بازو کی قوت پہ لاکھوں سلام

قلزم حسن کی جن کو شاخیں کہیں
جن سے سوتے لطافت کے پھوٹا کریں
جن سے نہریں تجلی کی جاری رہیں
نور کے چشمے لہرائیں دریا بہیں
اُنگلیوں کی کرامت پہ لاکھوں سلام

عاصیوں کی بھلائی کے چمکے ہلال
قید غم سے رہائی کے چمکے ہلال
جلوۂ مصطفائی کے چمکے ہلال
عید مشکل کشائی کے چمکے ہلال
ناخنوں کی بشارت پہ لاکھوں سلام

عقل حیراں ہے اداراک کو ہے جنوں
کیف ہے سر یہ سجدہ و خرد سرنگوں
کون پہنچا ہے تا حدِ سر دروں
دل سمجھ سے ورا ہے مگریوں کہوں
غنچۂ رازِ وحدت پہ لاکھوں سلام

آسماں ملک اور جو کی روٹی غذا
لامکاں ملک اور جو کی روٹی غذا
کن فکاں ملک اور جو کی روٹی غذا
کل جہاں ملک اور جو کی روٹی غذا
اُس شکم کی قناعت پہ لاکھوں سلام

بے بسوں کی قیادت پہ کھنچ کر بندھی
بے کسوں کی رفاقت پہ کھنچ کر بندھی
عاصیوں کی اعانت پہ کھنچ کر بندھی
جو کہ عزم شفاعت پہ کھنچ کر بندھی
اس کمر کی حمایت پہ لاکھوں سلام

اوج وہ زانوؤں کا ہے نزدیک ودُور
یہ جہاں کیا۔ دوزانُو ہے دنیائے نور
یہ ملک، یہ فرشتے، یہ غلماں، یہ حور
انبیاء تہ کریں زانو ان کے حضور
زانوؤں کی وجاہت پہ لاکھوں سلام

کعبۂ دین ودل یعنی نقشِ قدم
جن کی عظمت نہیں عرش اعظم سے کم
ہر بلندی کا سر ہوگیا جِس پہ خم
کھائی قرآں نے خاکِ گُذر کی قسم
اُس کفِ پاکی حرمت پہ لاکھوں سلام

افتخارِ دو عالم ہے ان کا وجود
وہ سراپا کرم ہیں بربِّ ودُود
اُن پہ ہوتا ابد رحمتوں کا ورود
پہلے سجدے پہ روزِ ازل سے درود
یاد گاری امت پہ لاکھوں سلام

مثل مادر حلیمہ پہ احساں کریں
ان کی بخشش کا طفلی میں ساماں کریں
پاس حق ِ رضاعت کا ہر آں کریں
بھائیوں کے لئے ترک پستاں کریں
دودھ پتیوں کی نصفت پہ لاکھوں سلام

مولد ذاتِ یکتا پہ یکتا درود
آمد شاہِ والا پہ اعلیٰ درود
تا قیامت شب وروز صدہا درود
فضل پیدائشی پر ہمیشہ درود
کھیلنے سے کراہت پہ لاکھوں سلام

دلکش و دلربا پیاری پیاری پھبن
خود پھبن نے بھی دیکھی نہ ایسی پھبن
جس پہ قربان اچھی سے اچھی پھبن
اللہ اللہ وہ بچپنے کی پھبن
اس خدا بھاتی صورت پہ لاکھوں سلام

گیسوؤں پر معنبر مہکتی درود
رخ پہ صدقے منور مہکتی درود
نازکی پر نچھاور مہکتی درود
بھینی بھینی مہک پر مہکتی درود
پیاری پیاری نفاست پہ لاکھوں سلام

ان کے پاکیزہ گیسو پہ لاکھوں درود
ان کی عنبر فشاں بُو پہ لاکھوں درود
ان کے آئینہء رو پہ لاکھوں درود
الغرض ان کے ہر مو پہ لاکھوں درود
ان کی ہر خو وخصلت پہ لاکھوں سلام

فطرتِ بے خلش پہ کروڑوں درود
ظرف عالی منش پہ کروڑوں درود
جانبِ دل کشش پہ کروڑوں درود
سیدھی سادھی روش پہ کروڑوں درود
سادی سادی طبیعت پہ لاکھوں سلام

جس کے زیر نگیں ہیں سماک وسمک
جس کے حلقے میں ہیں چاند سورج فلک
جس کا سکہ رواں فرش سے عرش تک
جس کے گھیرے میں ہیں انبیاء و ملک
اس جہانگیر بعثت پہ لاکھوں سلام

کس قدر ہے حسیں بدر کا معرکہ
اولیں باب تاریخ ِ اسلام کا
لب پہ نصرت کے نصر من اللہ تھا
وہ چقا چاق خنجر سے آتی صدا
مصطفیٰ تیری صولت پہ لاکھوں سلام

ان کی ہیبت سے وہ کپکپاتی زمیں
در سے پہم پسینے بہاتی زمیں
گونج سے خوف شیروں کی کھاتی زمیں
شور تکبیر سے تھر تھراتی زمیں
جنبش جیش نصرت پہ لاکھوں سلام

فوج اعداء میں گھس کر سناں بازیاں
دور ہی سے کبھی تیر اندازیاں
پرچم افتخار صف غازیاں
ان کے آگے وہ حمزہ کی جانبازیاں
شیر غرّاں کی سطوت پہ لاکھوں

جس کی سرکار ہے بارگاہ قبول
جس کے دربار میں اولیاء ہیں شمول
جس پہ ہے رحمتِ مصطفیٰ کا نزول
حضرت حمزہ شیر ِ خداورسول
زینتِ قادرِیت پہ لاکھوں سلام

کل شہیدانِ بدرو احد پر درود
سب فدایان بدرواحد پر درود
جیشِ مردانِ بدرو احد پر درود
جاں نثارانِ بدرو احد پر درود
حق گذارانِ بیعت پہ لاکھوں سلام

ذاتِ یکتا کے اُن پر کروڑوں درود
رب کعبہ کے ان پر کروڑوں درود
حق تعالیٰ کے ان پر کروڑوں درود
ان کے مولیٰ کے ان پر کروڑوں درود
ان کے اصحاب وعرت پہ لاکھوں سلام

مظہر مصدرِ ذاتِ رب قدیر
جن کے دیکھے سے ہوتے ہیں روشن ضمیر
ماہ توحید کے نجم ہائے منیر
خونِ خیر الرسل سے ہے جن کا خمیر
ان کی بے لوث طینت پہ لاکھوں سلام

راحتِ جانِ سلطانِ ہر دوسرا
نورِ چشم جناب حبیب خدا
عین لختِ دل سرورِ انبیاء
اس بتول جگر پارۂ مصطفیٰ
حجلہ آرائے عفت پہ لاکھوں سلام

وہ ردا جس کی تطہیر اللہ رے
آسماں کی نظر بھی نہ جس پر پڑے
جس کا دامن نہ سہوا ہوا چھوسکے
جس کا آنچل نہ دیکھا مہ و مہر نے
اس ردائے نزاہت پہ لاکھوں سلام

صادقہ: صالحہ، صائمہ صابرہ
صافِ دل، نیک خو، پارسا، شاکرہ
عابدہ، زاہدہ، ساجدہ، ذاکرہ
سیدہ، زاہرہ، طیبہ، طاہرہ
جان ِ احمد کی راحت پہ لاکھوں سلام

گوہر فاطمہ، مرکزِ اتقیاء
پسر مرتضیٰ، مرجع اصفیاء
نورِ نورِ خدا، سرورِ اولیاء
حسن مجتبیٰ، سید الاسخیاء
راکب ِ دوشِ عزت پہ لاکھوں

وہ انہیں غم مونس بے کساں
وہ سکونِ دل مالکِ انس وجاں
وہ شریک حیاتِ شہ لامکاں
سیما پہلی ماں کہفِ امن واماں
حق گذارِ رفاقت پہ لاکھوں سلام

شمع تابانِ عرش آستانِ نبی
غم گسار نبی طبع دانِ نبی
راحتِ قلب وروحِ روان ِ نبی
بنتِ صدیق آرام جانِ نبی
اس حریم برأت پہ لاکھوں سلام

عظمتِ حسن معمور جن کی گواہ
عفتِ ذاتِ مستور جن کی گواہ
شانِ رب چشم بددور جن کی گواہ
یعنی سورۂ نور جن کی گواہ
ان کی پر نور صورت پہ لاکھوں سلام

جن سے اپنی نگاہیں ہوائیں چرائیں
دیکھنے کا تصور بھی دل میں نہ لائے
جن کے پردے کا پر تو فرشتے نہ پائیں
جن میں روح القدس بے اجازت نہ جائیں
ان سرادق کی عصمت پہ لاکھوں سلام

رفعت وافضلیت کا مژدہ ملا
خاص عزو وجاہت کا مژدہ ملا
رحمت کل سے رحمت کا مژدہ ملا
وہ دسوں جن کو جنت کا مژدہ ملا
اس مبارک جماعت پہ لاکھوں سلام

قصر پاک ِ خلافت کے رکن رکیں
شاہِ قوسین کے نائب اولیں
یار غارِ شہنشاہِ دنیا ودیں
اصدق الصادقین سید المتقین
چشم و گوش وزارت پہ لاکھوں سلام

وہ عمر وہ حبیب شہ بحرو بر
وہ عمر خاصۂ ہاشمی تاجور
وہ عمر کھل گئے جس پہ رحمت کے در
وہ عمر جس کے اعداء پہ شیدا سقر
اس خدا دوست حضرت پہ لاکھوں سلام

وہ غنی کیوں نہ تقدیر کا ہو دھنی
جس نےپائے ہوں دو لعل کان نبی
شرح نور علی نور ہے زندگی
در منثور قرآں کی سلک بہی
زوجِ دو نور عفت پہ لاکھوں سلام

سرورِ اولیائے زمان وزمیں
مرکز معرفت اصل علم الیقین
باب علم شہنشاہِ دنیا و دیں
مرتضیٰ شیر حق اشجع الاشجعین
ساقئ شیر و شربت پہ لاکھوں سلام

جتنے تارے ہیں اس چرخ ذیجاہ کے
جس قدر ماہ پارے ہیں اس ماہ کے
جانشیں ہیں جو مرد حق آگاہ کے
اور جتنے ہیں شہزادے اس شاہ کے
ان سب اہل مکانت پہ لاکھوں سلام

اس نظر کا مقدر ہے کس اوج پر
اس کی تقدیر ہے کس قدر بخت ور
اس نظر پر فدا تاب چشم سحر
جس مسلماں نے دیکھا انہیں اک نظر
اس نظر کی بصارت پہ لاکھو ں سلام

جن کا کوثر ہے جنت ہے اللہ کی
جن کے خادم پہ شفقت ہےاللہ کی
دست پر جن کے رحمت ہے اللہ کی
جن کے دشمن پہ لعنت ہے اللہ کی
ان سب اہل محبت پہ لاکھوں سلام

نجم ہائے درخشاں حسن لطیف
جن سے روشن ہوئے سینہ ہائے کثیف
چارار کان ایوان شرع شریف
شافعی۔ مالک۔ احمد۔ امام حنیف
چار باغِ امامت پہ لاکھوں سلام

حق کے محرم امام التقیٰ والنقیٰ
ذات اکرم امام التقیٰ والنقیٰ
قطب عالم امام التقیٰ والنقیٰ
غوث اعظم امام التقیٰ والنقیٰ
جلوۂ شان ِ قدرت پہ لاکھوں سلام

ایسی بر تر ہوئی گردن ِ اولیاء
اوج مہ پر ہوئی گردن اولیاء
عرش بر سر ہوئی گردن ِ اولیاء
جس کی منبر ہوئی گردن ِ اولیاء
اس قدم کی کرامت پہ لاکھوں سلام

ہے خدا یا کرم بار تیری جناب
از طفیل جناب رسالت مآب
وہ کہ جن کا ہے یٰسین وطٰہٰ خطاب
بے عذاب وعتاب وحساب وکتاب
تا ابد اہل سنت پہ لاکھوں سلام

میں بھی ہوں اک گدائے درِ اولیاء
میں بھی ہوں اک سگ کوئے غوث الوریٰ
میں بھی ہوں ذرۂ کوچۂ مصطفیٰ
تیرے ان دوستوں کے طفیل اے خدا
بندۂ ننگ خلقت پہ لاکھوں سلام

تیری رحمت رہے ان پہ پر تو فگن
ان پہ ہو سایۂ لطف شاہ زمن
دیر تک یہ درخشاں رہے انجمن
میرے استاذ ماں باپ بھائی بہن
اہل ولد وعشیرت پہ لاکھوں سلام

ابر جود و عطا کس پہ برسا نہیں؟
تیرا لطف وکرم کس پہ دیکھا نہیں؟
کس جگہ اور کہاں تیرا قبضہ نہیں؟
ایک میرا ہی رحمت پہ دعویٰ نہیں
شاہ کی ساری امت پہ لاکھوں سلام

آفتاب قیامت کے بدلے ہوں طور
جب کہ ہو ہر طرف نفسی نفسی کا شور
جب کسی کا کسی پر نہ چلتا ہو زور
کاش محشر میں جب ان کی آمد ہو اور
بھیجیں سب ان کی شوکت پہ لاکھوں

مرشدی شاہ احمد رضا خاں رضا
فیضیابِ کمالات حسّاں رضا
ساتھ اؔختر بھی ہو زمزمہ خواں رضا
جب کہ خدمت کے قدسی کہیں ہاں رؔضا
مصطفیٰ جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

مرحبا اے سبہ خیر الانام
کیجئے مقبول یہ لاکھوں سلام

image_pdf⇒ ⇒ Download PDF Format ⇐ ⇐image_print⇒ ⇒ Print Naat Lyrics ⇐ ⇐

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

تضمین بر سلام رضا

error: Content is protected !!